آٹو کمپنیوں کی مقامی آٹو انڈسٹری میں کئی ملینز کی سرمایہ کاری


کیپٹل ٹی وی کی رپورٹ کے مطابق آٹو پالیسی 2016-21ء کے تحت پاکستان کی مقامی آٹو انڈسٹری میں آٹو کمپنیوں نے کئی ملین ڈالرز کی سرمایہ کاری کی۔

حکومت کی جانب سے نئی آٹو پالیسی متعارف کروائے جانے کے بعد دنیا بھر سے کئی نئے آٹومیکرز کئی ملینز کی سرمایہ کاری کے ساتھ پاکستان میں داخل ہوئے جن میں دو کوریائی اور ایک فرانسیسی آٹومیکر شامل ہیں۔

مقامی میڈیا ادارے کی پیش کردہ تفصیلات کے مطابق الفطیم اپنے پارٹنر رینو (رینالٹ) کے ساتھ مقامی آٹو انڈسٹری میں 230 ملین ڈالرز کی سرمایہ کاری کر رہا ہے۔ ادارہ گاڑیوں کی اسمبلنگ کے لیے فیصل آباد میں اپنا پلانٹ بھی بنا رہا ہے۔

آگے دیکھیں تو ریگل آٹوموبائل انڈسٹریز بھی DFSK موٹرز کے تعاون سے پاکستان میں 10.71 ملین ڈالرز کی سرمایہ کاری کرچکا ہے۔ جوائنٹ وینچر DFSK گلوری 580 کے نام سے مقامی صارفین کے لیے ایک SUV بھی لانچ کرچکا ہے۔ مزید برآں، یونائیٹڈ موٹرز نے 19.05 ملین ڈالرز کی سرمایہ کاری اور ایک 800cc ہیچ بیک کار بھی لانچ کرچکا ہے۔ ادارے نے دو چینی شراکت داروں لویانگ ڈاہے نیو انرجی وہیکل اور یانگزے موٹر گروپ کے ساتھ شراکت داری کر رکھی ہے۔

کیا لکی موٹرز پاکستان لمیٹڈ 190 ملین ڈالرز کی سرمایہ کاری کر چکا ہے جبکہ خالد مشتاق موٹرز نے 3.50 ملین ڈالرز کی سرمایہ کاری کی۔ کیا نے پاکستان میں اپنی گرینڈ کارنیول بھی متعارف کروا دی ہے۔ اس کے علاوہ گندھارا نسان، دیوان فاروق موٹرز، ہیونڈائی نشاط موٹرز، فوٹون JW آٹو پارک اور سازگار انجینیئرنگ ورکس لمیٹڈ بالترتیب 41.3 ملین ڈالرز، 145 ملین ڈالرز، 163 ملین ڈالرز، 11.45 ملین ڈالرز اور 31.01 ملین ڈالرز کی سرمایہ کاری کریں گے۔

مزید برآں ماسٹر موٹرز لمیٹڈ 101.52 ملین ڈالرز کی سرمایہ کاری کرنے جا رہا ہے اور پاک چائنا موٹرز لیفان آٹوموبائل کے تعاون کے ساتھ 24.25 ملین ڈالرز کی سرمایہ کاری کرے گا۔

آخر میں ٹاپسن موٹرز اپنے چینی شراکت داروں کے ساتھ مل کر مقامی آٹو انڈسٹری میں 5.43 ملین ڈالرز کی سرمایہ کاری کرے گا۔

مقامی آٹو انڈسٹری میں کئی ملینز کی سرمایہ کاری کرنے والے نئے اداروں کے علاوہ ٹویوٹا IMC بھی 3.3 ارب پاکستانی روپے خرچ کرے گا۔

ہماری طرف سے اتنا ہی، اپنے خیالات نیچے تبصروں میں پیش کیجیے۔


My name is M. Ali Laghari and I love to read and write about Cars.

Top