ٹریفک قوانین کی خلاف ورزی: جرمانے میں چار گنا اضافہ ضروری ہے

Traffic-Rules-Featured-Image-for-urdu

ٹریفک قوانین کی خلاف ورزی سے ہونے والے حادثات ترقی پذیر ممالک کے بڑے مسائل میں سے ایک ہیں۔ جنوبی ایشیائی ممالک میں پاکستان کا شمار تیسرے نمبر پر ہوتا ہے کہ جہاں ٹریفک حادثات میں سب سے زیادہ اموات واقع ہوتی ہیں۔ ایک تحقیق کے مطابق سالانہ ہزاروں افراد ٹریفک حادثات میں جاں بحق اور زخمی ہوجاتے ہیں۔ شرح اموات کی فہرست میں سر فہرست طویل عرصے سے جنگ زدہ افغانستان اور دوسرے نمبر پر سب سے زیادہ آبادی والے ملک بھارت کا ہے جبکہ سابقہ مشرقی پاکستان اور موجودہ بنگلہ دیش میں صورتحال یہاں کے مقابلے میں بہت زیادہ بہتر ہے۔

سگنل کی خلاف ورزی اور مقررہ رفتار سے زیادہ تیز گاڑی چلانے کے باعث ہونے والے اندوہناک حادثات سے بچنے کے لیے ٹریفک قوانین پر عملدرآمد بہت ضروری ہے۔ اس کو یقینی بنانے کے لیے متعدد تجاویز اور اصلاحات پر قومی و صوبائی اسمبلیوں کے ساتھ عوامی حلقوں میں بھی بحث ہوتی رہی ہے۔اسی سلسلے میں گذشتہ سال سندھ کی صوبائی اسمبلی نے ٹریفک قوانین کی خلاف ورزی پر ہونے والے جرمانے میں اضافے کی تجویز منظور کی تھی۔ لیکن صورتحال اس کے بعد بھی جوں کی توں ہے جس کی 2 بنیادی وجوہات ہیں۔ اول یہ کہ 49 سال بعد کیا گیا یہ اضافہ بہت معمولی ہے اور دوئم اس میں انسداد رشوت کے معاملے کو مدنظر نہیں رکھا گیا۔اگر جرمانے کی رقم کم از کم چار گنا بڑھائی جاتی تو اس سےبہت سارے فوائد حاصل کیے جاسکتے تھے۔ وہ کیسے؟ آئیےدیکھتے ہیں۔

اس وقت گاڑی کے سیاہ شیشوں، سگنل کی خلاف ورزی کرنے اور غلط سمت میں گاڑی یا موٹر سائیکل چلانے کا جرمانہ محض 500 روپے، بغیر ہیلمٹ موٹر سائیکل چلانے پر 300 روپے اور تیز رفتاری پر 400 روپے ہے۔غیر رجسٹر گاڑی چلانے پر 1 ہزار روپے کا جرمانہ ہے لیکن یہ تب کی بات جب آپ دھر لیے جائیں۔ انتہائی سنگین نوعیت کے جرائم جس میں شہریوں کو شدید جانی اور مالی خطرات لاحق ہیں پر محض چند سو روپے کا جرمانہ سمجھ سے باہر ہے۔ اور اگر خلاف ورزی کا معاملہ کسی بے ایمان پولیس اہلکار کے ہاتھ لگ جائے تو اور بھی سستے میں جان چھوٹ سکتی ہے چاہے جرم کی نوعیت کتنی ہی سنگین کیوں نہ ہو۔ ان دونوں مسائل کا حل یہ ہے کہ جرمانے کی رقم کو کم از کم1 ہزار روپے کردیا جائے اور دوبارہ وہی غلطی دہرانے پر جرمانے کی رقم دوگنا بڑھا دی جائے۔ اس سے نہ صرف قانون کی خلاف ورزی کرنے والے پر زیادہ بوجھ پڑے گا بلکہ اس کی حوصلہ شکنی بھی ہوگی۔ اب چاہے وہ اس کا خمیازہ بھگتنے کے لیے قانونی طریقہ اپنائے یا غیر قانونی راستہ منتخب کرے۔

گذشتہ سال ہونے والے اضافے سے قبل 1965ء کے قوانین لاگو تھے جس میں جرمانے کی رقم کم از کم 50 روپے اور زیادہ سے زیادہ 300 روپے تھی۔ یہ پچاس سال پرانے زمانے کے اعتبار سے بہت زیادہ اور حق بجانب تھا۔ وقت کے ساتھ لوگوں کی قوت خرید میں اضافہ ہوا، مہنگی گاڑیاں اور موٹر سائیکلیں سڑکوں پر نظر آنے لگیں لیکن قانون کی خلاف ورزی پر جرمانے کی رقم میں کوئی تبدیلی نہیں کی گئی۔ یہی وجہ ہے کہ اب عام شہری جرمانہ بھرنے کے چکروں سے بچنے کے لیے اجلی وردی اور سیاہ بطن والوں کو معمولی رشوت دے کر جان چھڑا لیتا ہے۔ یوں قانون کی خلاف ورزی محض چند ہرے اور لال نوٹوں کے عوض جائز قرار پاتی ہے اور ہر شخص بلا خوف و خطر اور کچھ لوگ فخریہ قانون کی خلاف ورزی کرتے ہیں۔ اگر جرمانے کی رقم بڑھا دی جائے اور اس میں سے کچھ مقرر حصہ چالان کرنے والے اہلکار کو دیا جائے تو اس سے رشوت کا نظام ختم کرنے میں مدد ملے گی۔

* تمام رقوم پاکستانی روپے میں درج کی گئی ہیں

* تمام رقوم پاکستانی روپے میں درج کی گئی ہیں

یہ تجویز اچھوتی یا ناقابل عمل نہیں بلکہ جرمانے میں واضح اضافے کا طریقہ کار دنیا کے دیگر ممالک میں بھی استعمال کیا جاچکا ہے۔ کینیڈا کے صوبے البرٹا سے لے کر کیریبین جزائر کے ملک جمیکا تک میں ٹریفک حادثات کو روکنے کے لیے یہی طریقہ کار اختیار کیا گیا ہے۔جمیکا میں موٹر سائیکل پر بغیر ہیلمٹ ڈبل سواری کرنے پر 15 ہزار ڈالر جرمانہ کیا جاتا ہے۔ اس کے علاوہ بھی دیگر ممالک کی مثال ملاحظہ کریں تو وہاں پہلے ہی ٹریفک قوانین بہت سخت اور جرمانے کہیں زیادہ ہیں۔ جرمنی میں صرف تیز رفتاری پر 10 یورو (1100روپے) سے 680 یورو (80 ہزار روپے) تک کا جرمانہ ہوسکتا ہے۔ قطر میں ٹریفک قوانین کی خلاف ورزی پر 500 درہم (14 ہزار روپے سے زائد) جرمانہ ہوسکتا ہے جبکہ دبئی میں سگنل کی خلاف ورزی کرنے پر تین سال جیل بھیجنے کے علاوہ 1500 درہم کا جرمانہ کیا جاسکتا ہے ، یہ رقم 40 ہزار پاکستانی روپے سے بھی زیادہ بنتی ہے۔

اضافی جرمانے سے ہونے والی رقم کو ٹریفک کے شعبے میں بہتر اور جدید نظام لاگو کرنے کے لیے استعمال کیا جاسکتا ہے۔ ان میں عوام کو ٹریفک قوانین سے آگاہ کرنے، سرکاری سطح پر گاڑی اور موٹر سائیکل چلانے کی تعلیمی دینے، ٹریفک پولیس کو تیز رفتار موٹر سائیکلیں فراہم کرنے، شاہراہوں پر سیکورٹی کیمرے اور ٹریفک پولیس کی گاڑیوں و موٹر سائیکلوں پر ڈیش کیمز لگانے، سڑکوں پر موجود ٹریفک نشانات کو مزید واضح کرنے جیسے معاملات شامل ہیں۔ اس سے نہ صرف ٹریفک پولیس کی کارکردگی بہتر ہوگی بلکہ گاڑیوں میں سفر کرنے والوں کے ساتھ ساتھ پیدل چلنے والے لوگوں کی حفاظت بھی ممکن بنائی جاسکے گی۔علاوہ ازیں جرمانے کی رقم جمع کرنے کے نظام کو بھی بہتر بنانے کی اشد ضرورت ہے اور اسے بھی حاصل ہونے والے اضافی سرمائے سے پورا کیا جاسکے گا۔

Asad Aslam

A PakWheeler with a degree in mass communication. He tweets as @masadaslam

  • Dr. Aamir Liaquat Hussain

    bhai jo apne double ker k likha hai na uska bhi double first time main hona chahye or phir uska double next time.

Top