ہیونڈائی آیونِک بمقابلہ ٹویوٹا پرائیس


ہیونڈائی نشاط موٹرز نے 22 مارچ 2019ء کو پاکستان میں ایک اور نئی کومپیکٹ اینڈ ہائبرڈ ہیچ بیک ‘ہیونڈائی آیونِک’ متعارف کروائی۔ کیا یہ گاڑی ٹویوٹا پرائیس کا زور توڑ پائے گی؟ آئیے دیکھتے ہیں۔

ہیونڈائی نشاط فیملی میں ایک اور “اضافہ”

ہیونڈائی آیونک لاہور کے امپوریم مال میں موجود ہیونڈائی کے ڈجیٹل شوروم میں متعارف کروائی گئی تھی کہ جہاں اس نے کئی لوگوں کی توجہ اپنی جانب مبذول کروائی۔ مقامی مارکیٹ میں داخل ہونے والے اِس نئے ادارے سے سب کو بہت توقعات ہیں۔ ہیونڈائی آیونک کو متعدد بار سڑکوں پر بھی دیکھا گیا ہے اور ہیونڈائی کی جانب سے یہ گاڑی مقامی مارکیٹ میں کسی بھی وقت متعارف کروائی جا سکتی تھی۔ پہلی چیز جو آیونک کے بارے میں کسی کے ذہن میں آتی ہے کہ یہ پاکستان میں ٹویوٹا پرائیس کی چوتھی جنریشن کے مدِمقابل ہے۔

انجن:

نئی کومپیکٹ ہیونڈائی آیونک کاپا 1.6 ایٹکنسن GDI انجن کی حامل ہے جو 1580cc کا ہے۔ آیونک کا طاقتور انجن 5700 rpm پر 104 hp کی زیادہ سے زیادہ طاقت پیدا کرتا ہے اور 4000 rpm پر 147 Nm کا زیادہ سے زیادہ ٹارک رکھتا ہے۔ یہ 6-اسپیڈ ڈوئل کلچ ٹرانسمیشن کے ساتھ فرنٹ ویل ڈرائیو موڈ کی بھی حامل ہے۔ دوسری جانب اس کی مقابل ٹویوٹا پرائیس کچھ زیادہ طاقتور ایٹکنسن سائیکل انجن مع 4 اِن-لائن سلینڈرز اور 16 والو DOHC کا لطف اٹھاتی ہے۔ عام الفاظ میں پرائیس ٹویوٹا کی بنائی گئی 1798 cc کی ہائبرڈ سیڈان ہے جو sequential ملٹی-پورٹ فیول انجکشن سسٹم رکھتی ہے۔ پرائیس کا انجن 5200 rpm پر 72 kW کی زیادہ سے زیادہ طاقت پیدا کر سکتا ہے ساتھ ہی 3600 rpm پر 142 Nm کا زیادہ سے زیادہ ٹارک بھی۔ ٹویوٹا کی جانب سے continuously variable transmission یعنی CVT کے ساتھ زبردست سہولت فراہم کی گئی ہے۔ مجموعی طور پر دونوں ہائبرڈ گاڑیاں انجن گنجائش کے لحاظ سے بہت طاقتور ہیں۔

الیکٹرک موٹر اور بیٹری تفصیلات:

کیونکہ دونوں گاڑیاں ہائبرڈ یونٹس ہیں، اس لیے ان میں دیگر خصوصیات کے ساتھ ایک الیکٹرک موٹر اور بیٹری پیک بھی موجود ہے۔ ہیونڈائی نے اپنی کومپیکٹ ہائبرڈ ہیچ بیک کو 1.56 kWh کی گنجائش رکھنے والی مستقل مقناطیسی synchronousموٹر کی طاقت دے رکھی ہے۔ الیکٹرک موٹر لیتھیم آیون پولیمر بیٹری پیک سے جڑی ہوئی ہے جو بیٹری موڈ پر چلاتے ہوئے گاڑی کو 44 hp اور 144 Nm ٹارک کی زیادہ سے زیادہ طاقت حاصل کرنے میں مدد دیتا ہے۔ اس کے مقابلے میں ٹویوٹا پرائیس نکل-میٹل ہائیڈرائیڈ بیٹری کے ساتھ جڑی موٹر سے لیس ہے جو 71 hp اور 163 Nm ٹارک پیدا کر سکتی ہے۔ دونوں کا تقابل کریں تو ٹویوٹا پرائیس میں زیادہ طاقتور موٹر اور بیٹری دکھائی دیتی ہے جو گاڑی کے سائز اور انجن کی طاقت دیکھ کر سمجھ میں بھی آتی ہے۔

ایکسٹیریئر:

حال ہی میں متعارف کی گئی آیونک کا پروٹوٹائپ امپوریم مال میں واقع ہیونڈائی کے ڈجیٹل شوروم میں موجود ہے جس کے اگلے حصے پر خوبصورت ریڈی ایٹر گرِل ہے جسے چمکدار سیاہ رنگ دیا گیا ہے۔ ریڈی ایٹر گرِل کا اینگولر ڈیزائن دونوں کناروں پر ہیڈلائٹس پر جا کر ختم ہوتا ہے۔ ہیونڈائی آیونک کے پروجیکشن ہیڈلیمپس LED ڈے ٹائم رننگ لائٹس کے ساتھ فراہم کیے گئے ہیں جو گاڑی کو خوبصورت شکل و صورت دیتے ہیں۔ ہیچ بیک کی سائیڈوں پر جائیں تو دروازوں کے ہینڈلز کروم فنِش کی کوٹنگ کے ساتھ ملتے ہیں۔ پیچھے کی جانب اسپائلر کے ساتھ LED لیمپس موجود ہیں کہ جس میں ہائی ماؤنٹ بریک لیمپ لگے ہوئے ہیں۔

اس کے مقابلے میں ٹویوٹا پرائیس کہیں زیادہ طاقتور اور بھرپور فرنٹ-آن یونٹ ہے۔ اس میں ڈے ٹائم رننگ لائٹس کے ساتھ LED ہیڈلیمپس اور فرنٹ اور ریئر فوگ لیمپس ہیں۔ ٹویوٹا کا مشہور ہائبرڈ ماڈل ایروڈائنامک ڈیزائن کا ایک بھرپور شاہکار ہے۔ نچلے سینٹر آف گریوِٹی کے ساتھ یہ گاڑی کوپ-جیسی رُوف-لائن رکھتی ہے۔ اس کے علاوہ پیچھے کی جانب اس میں مربع شکل کے LED لیمپس ہیں۔ مینوفیکچرر کی پیش کردہ خصوصیات کے ساتھ پرائیس کا ہموار اور اسپورٹی انداز کسی بھی گاڑیوں کے شوقین فرد کی اولین پسند ہے۔

انٹیریئرز اور فیچرز:

اب تک ہم ہیونڈائی آیونک کے بارے میں جو جانتے ہیں ، اس کے مطابق یہ گاڑی کمپنی کی پیش کردہ جدید خصوصیات کے ساتھ وسیع گنجائش رکھتی ہے۔ انٹیریئر ہیونڈائی کی استعمال کردہ سیاہ رنگت کے ساتھ زبردست لگتا ہے۔ اس میں گنجائش کافی زیادہ ہے، اوپر بھی اور آگے کی طرف ٹانگیں پھیلانے کے لیے بھی۔ گاڑی میں متعدد خصوصیات ہیں جن میں آٹومیٹک ایئر کنڈیشننگ مع کلائمٹ کنٹرول شامل ہے۔ایئر وینٹس بہت خوبصورت سے ڈیزائن کیے گئے ہیں اور ڈیش بورڈ اور دیگر چیزوں کی بلڈ کوالٹی حیران کن ہے، جس کی توقع ہیونڈائی سے کوئی بھی رکھ سکتا ہے۔ کومپیکٹ ہیچ بیک الیکٹریکلی ایڈجسٹ اور ری ٹریکٹ کرنے والے سائیڈمررز رکھتی ہے ساتھ ہی اسٹیئرنگ ویل میں ٹِلٹ اور ٹیلی اسکوپک ایڈجسٹمنٹ فیچر بھی۔ آٹو ہیڈلائن کنٹرول ڈرائیور کے لیے سڑک پر روشنی کی مختلف حالت میں ڈھل جانے کو ممکن بناتا ہے۔ آٹومیٹک کروز کنٹرول آپشن بھی آیونک میں موجود ہے۔ پچھلی سیٹ میں 60:40 فولڈنگ تناسب کے ساتھ جھکنے کا آپشن موجود ہے تاکہ اضافی سامان کے لیے جگہ بنائی جا سکے۔ کیبن میں بنیادی فیچر کے طور پر آگے ایک پرسنل لیمپ بھی موجود ہے۔ البتہ اس میں وائرلیس فون چارجر ہے جس کی مقامی مارکیٹ میں مثال نہیں ملتی۔ کی-لیس انٹری کے آپشن کے ساتھ ہیونڈائی آیونک پاکستان میں ہیونڈائی نشاط فیملی میں ایک زبردست اضافہ ہے۔

چوتھی جنریشن کی ٹویوٹا پرائیس کا کیبن ٹویوٹا کے مشہورِ زمانہ سیاہ رنگت کے ڈیش بورڈ کے ساتھ کشادہ احساس دیتا ہے۔ سیڈان میں ڈوئل زون آٹومیٹک ایئر کنڈیشننگ ہے وہ بھی نمی کے لیے سینسرز کے ساتھ جو ٹھنڈک کی سطح کو ہم آہنگ رکھتا ہے۔ پرائیس کروز کنٹرول اور ڈرائیونگ موڈز کے درمیان سوئچنگ کرنے جیسے فیچرز سے بھی لیس ہے۔ اضافی آرام اور بیک سپورٹ کے لیے ڈرائیور کی سیٹ میں الیکٹرک ایڈجسٹمنٹ کنٹرولز کی حامل لمبر سپورٹ شامل ہے۔ تھری-اسپوک اسٹیئرنگ ویل ڈرائیونگ کے انداز کے مطابق ایڈجسٹ ہو سکتا ہے۔ اندرونی ڈور ہینڈلز کروم کوٹڈ ہیں جس کے ساتھ پاور ونڈوز اور گاڑی میں داخل ہونے کا اسمارٹ انٹری سسٹم بھی ہے۔ ٹویوٹا پرائیس ایک زبردست فیملی کار ہے جو انتہائی خاموش کیبن اور کئی فنکشن رکھتی ہے۔

ٹیکنالوجی اور کنیکٹیوِٹی:

ہیونڈائی آیونک MP3، بلوٹوتھ، CD ، AUX اور USB کنیکٹیوِٹی کے ساتھ 8 انچ ٹچ اسکرین انفوٹینمنٹ سسٹم رکھتی ہے۔ ٹچ پینل انٹرفیس AUX آڈیو جیک یا USB پورٹ کے ذریعے چلائے جانے والے گانے کی معلومات ظاہر کرتا ہے۔ البتہ یہ وہ فیچرز ہیں جو اس قیمت کی کسی بھی گاڑی میں لازمی آتے ہیں۔ مزید یہ کہ اسٹیئرنگ ویل کی لائن میں انسٹرومنٹ کلسٹر ڈسپلے کے اندر 7 انچ LCD نصب ہے، جو زبردست ہے اور آنکھوں کو بھلی لگتی ہے۔ فیول گیج، ڈرائیونگ موڈ انڈی کیشن وغیرہ سمیت تمام ضروری پیرامیٹرز اس کے اندر نظر آتے ہیں۔ وائرلیس موبائل چارجر فیچر ہیونڈائی آیونک کو یہاں پیش کی گئی تمام خوبیوں سے ممتاز کرتا ہے۔

 

 

Wireless Phone Charger

دوسری جانب ٹویوٹا پرائیس انتہائی رسپانسِو ٹیبلٹ اسٹائل کی 7 انچ کی ٹچ اسکرین رکھتی ہے جو اسمارٹ فون سے مطابقت رکھتنے والے ڈریگ اینڈ فلِک کنٹرولز پیش کرتی ہے ۔ اس کے علاوہ اس میں انٹرٹینمنٹ کے لیے USB پورٹ، BT اور AUX جیسے ویسے ہی کنیکٹیوٹی فیچرز بھی موجود ہیں۔ ملٹی انفارمیشن ڈسپلے ڈیش بورڈ کے بالکل درمیانی حصے میں ہے جو ایندھن کے استعمال کی تاریخ، اوسط فیول اکانمی، خالی ہونے تک فاصلہ، ہائبرڈ سسٹم انڈی کیٹر، طے کردہ فاصلہ اور ایسے ہی دیگر اہم پیرامیٹرز ظاہر کرتا ہے۔

دونوں گاڑیوں کے اپنے منفرد انٹرفیس اور ایک جیسے کنیکٹیوٹی فیچرز ہیں۔ ٹویوٹا کا پرائیس میں موجود انسٹریومنٹ کلسٹر ڈسپلے منفرد ہے جبکہ آیونک اسٹیئرنگ ویل کے ساتھ روایتی ڈسپلے سمیت آتی ہے۔

سیفٹی فیچرز:

آیونک اور پرائیس، دونوں جدید ترین سیفٹی فیچرز سے لیس ہیں۔ ہیونڈائی آیونک میں 7 SRS ایئربیگز ہیں جن میں ڈرائیور اور مسافر کے لیے ایک، ایک ایئر بیگ بھی شامل ہیں۔ باقی تھوریکس، کرٹین اور ڈرائیورکی ٹانگوں پر انسٹال ہیں۔ کسی بھی تصادم کی صورت میں یہ سب پھول جاتے ہیں اور مسافروں کوکسی سخت چوٹ سے بچاتے ہیں۔ مزیدبرآں، یہ کومپیکٹ ہیچ بیک بہتر ڈرائیونگ اور بریکنگ تجربے کے لیے اینٹی-لاک بریکنگ سسٹم (ABS)، ESC اور HAC ٹیکنالوجی بھی پیش کرتی ہے ۔ اگلے اور پچھلے دونوں پہیے ڈسک بریکس رکھتے ہیں۔ بیک ویو کیمرا بھی ہے جو ٹرانسمیشن کے ریورس موڈ پر منتقل ہوتے ہی پیچھے کا منظر دکھاتا ہے۔ گاڑی کی مزید سیفٹی کے لیے ہیونڈائی چوری سے بچانے کی خاطر انجن اموبیلائزر فراہم کرتا ہے اور یہ بلااجازت داخلے کی صورت میں سکیورٹی الارم بجاتی ہے۔ مزید برآں، پارکنگ سینسرز ڈرائیور کو کم جگہ پر باآسانی پارک کرنے کی سہولت دیتے ہیں۔

ٹویوٹا نے بھی محفوظ ڈرائیونگ تجربے کو یقینی بنانے کے لیے اپنی لگژری سیڈان میں بہترین سیفٹی فیچرز فراہم کیے ہیں۔ اس میں 6 ایئر بیگز  ہیں جو ٹکرانے کی صورت میں اثرات کو گھٹانے میں مدد دیتے ہیں۔ اینٹی-لاک بریکنگ سسٹم بھی گاڑی میں موجود ہے کہ جس کے اگلے اور پچھلے دونوں ٹائروں میں ڈسک بریکس ہیں۔ اس میں الیکٹرک پاور اسٹیئرنگ ٹریکشن کنٹرول فیچر کے ساتھ موجود ہے تاکہ زبردست stability ملے۔ گاڑی میں صرف مجاز فرد داخل ہو سکے، اس کے لیے انجن اموبیلائزر فیچر بھی موجود ہے۔ حرکت کرتے گرِڈ لائن کیمرے کی مدد سے متوازی پارکنگ اب آسان ہے۔ یہ کریش سیفٹی باڈی اسٹرکچر پر بنی ہوئی گاڑی ہے جو ٹکراؤ کی صورت میں زیادہ تر اثر خود جھیل لیتی ہے۔

دونوں عظیم اداروں کے یہ پریمیم کلاس ماڈلز سیفٹی فیچرز کے لحاظ سے یکساں طور پر محفوظ ہیں۔

قیمت:

ہیونڈائی نے پاکستان میں اب تک آیونک کی قیمت ظاہر نہیں کی۔ ہم دیگر ممالک میں اس کی قیمت کا تقابل کرکے محض اندازہ ہی لگا سکتے ہیں، اس کی قیمت 40 سے 50 لاکھ کے درمیان ہوگی۔ دوسری جانب ٹویوٹا پرائیس کی ایکس-فیکٹری قیمت 66 لاکھ روپے ہے۔ اس قیمت میں 8.5 فیصد سیلز ٹیکس شامل ہے لیکن وِد ہولڈنگ ٹیکس نہیں۔ اس لیے ہر لحاظ سے پاکستان میں آیونک کی قیمت پرائیس سے کم ہوگی۔ درحقیقت آیونک 1580 cc کومپیکٹ ہیچ بیک ہے جبکہ پرائیس 1798 cc سیڈان جس کی وجہ سے قیمت کا یہ فرق بجا لگتا ہے۔

مجموعی طور پر ہیونڈائی آیونک پاکستان کی مقامی آٹوموبائل انڈسٹری میں داخل ہونے والے نئے اداروں کی لائن اپ میں زبردست اضافہ ہے۔ واضح رہے کہ کمپنی اس سے قبل پچھلے مہینے اپنی کومپیکٹ SUV سانتا فی اور گرینڈ اسٹاریکس جاری کر چکاہے۔

پاکستان میں تازہ ترین گاڑیوں کے اجراء کے بارے میں تازہ ترین خبریں پانے کے لیے پاک ویلز پر آتے رہیے۔


Google App Store App Store

Apart from being an Electrical Engineer by profession, he is an automotive content writer at PakWheels, a web designer and a photographer.

Top