ڈالر کی قیمت 144 روپے تک پہنچ گئی، آٹومیکرز ممکنہ طور پر قیمتوں میں اضافہ کریں گے


بین الاقوامی مالیاتی فنڈ (IMF) سے کیے گئے وعدوں کو نبھانے کے لیے حکومت نے امریکی ڈالر کی قیمت میں یکدم 10 روپے کا اضافہ کردیا ہے جو 144 روپے تک پہنچ گیا ہے۔

Forex.pk سے لیے گئے اس گراف میں آپ ڈالر کا ہفتہ وار رحجان دیکھ سکتے ہیں:

Dollar increase

29 نومبر کو امریکی ڈالر، جس کی شرحِ تبادلہ نے 134 روپے تھی، 30 نومبر 2018ء بروز جمعہ 144 روپے تک پہنچ گیا۔ پاکستانی روپے کا یہ حال کئی صنعتوں کو متاثر کرے گا، اور آٹوموٹِو صنعت بھی اس سے نہیں بچے گی۔

سال بھر میں ڈالر کی قیمت میں بڑھتے ہوئے رحجان کی وجہ سے تمام مقامی آٹومیکرز اپنی گاڑیوں کی قیمتیں متعدد بار بڑھا چکے ہیں اور ٹویوٹا IMC اور ہونڈا پاکستان کی جانب سے گاڑیوں کی قیمتوں میں آخری اضافے کے بعد کمپنیوں نے واضح طور پر کہا تھا کہ اگر ڈالر ایک مرتبہ پھر بڑھا تو صارفین ایک مرتبہ پھر قیمتوں میں اضافے کے لیے تیار ہو جائیں جو جنوری 2019ء سے نافذ العمل ہوگا۔

اب تک کسی مقامی آٹومیکر کی جانب سے کوئی تبصرہ تو نہیں کای گیا، البتہ آخری مرتبہ قیمتوں پر کی گئی نظرِ ثانی میں اداروں نے گاڑیوں کی یہ قیمتیں پیش کی تھیں۔

یہ ٹویوٹا کی نظرِثانی شدہ قیمتیں ہیں:

ذیل میں ہونڈا پاکستان کی گاڑیوں کی نظرِثانی شدہ قیمتیں ہیں:

ان کے علاوہ پاک سوزوکی نے اپنی مقامی گاڑیوں اور CBU(s) کی قیمتوں پر نظرِثانی کی ہے، البتہ ادارے نے ڈالر کی قیمت بڑھنے کی صورت میں ایک اور اضافے کا ذکر نہیں کیا۔ ذیل میں پاک سوزوکی کی نظرِثانی شدہ قیمتی ہیں جو نومبر 2018ء سے نافذ العمل ہیں۔

Pak Suzuki cars

ماڈلز

نئی قیمت

پرانی قیمت

سوزوکی کیاز مینوئل 19 لاکھ 60 ہزار روپے 18 لاکھ 59 ہزار روپے
سوزوکی کیاز آٹومیٹک 21 لاکھ روپے 19 لاکھ 99 ہزار روپے
APV 1.5L 27 لاکھ 18 ہزار روپے 24 لاکھ 18 ہزار روپے
سوزوکی وٹارا GLX 38 لاکھ 90 ہزار روپے 37 لاکھ 90 ہزار روپے

تازہ ترین خبروں اور جائزوں کے لیے PakWheels.com پر آتے رہیے۔


Top