ایکسائز اینڈ ٹیکسیشن ڈپارٹمنٹ نے امپورٹڈ گاڑیوں پر عائدلگژری ٹیکس ختم کرنے کی تجویز پیش کر دی۔

luxury-car
پنجاب کے ایکسائز اینڈ ٹیکسیشن ڈپارٹمنٹ نے امپورٹڈ گاڑیوں کی رجسٹریشن پر عائد لگژری ٹیکس ختم کرنے کی تجویز پیش کر دی۔اس ٹیکس کی تجویز دیگر صوبوں میں اس پر لاپرواہی برتنے کی وجہ سے پیش کی گئی ہے۔
پنجاب میں لگژری ٹیکس بیرونی ایکسچینج کی روانی پر بھی بری طرح اثر انداز ہو رہا ہے۔یہ چیز بھی دیکھنے میں آئی ہے کہ مختلف صوبوں میں لگژری ٹیکس کے یکساں نہ ہونے کی وجہ سے،صارفین اپنی گاڑیاں اسلام آباد میں رجسٹر کروا رہے ہیں جبکہ لگژری ٹیکس کی بائی پاسنگ پنجاب میں کر رہے ہیں۔
پنجاب کے ایکسائز اینڈ ٹیکسیشن ڈپارٹمنٹ نے اسلام آباد میں رجسٹریشن چارجز کم ہونے پر روشنی ڈالی کہ یہی صارفین کی دارلحکومت کی جانب کھچے جانے کی وجہ ہے۔لگژری ٹیکس کی چوری تیرہ سو سی سی انجن کپیسٹی سے زائدکی امپورٹڈ گاڑیاں خریدنے والے لوگوں کے لئے ہمیشہ سے ہی ایک آپشن رہی ہے۔
ماضی میں 2016میں، تیرہ سو سی سی یا اس سے زائد امپورٹڈ گاڑیوں کی رجسٹریشن پر لگژری ٹیکس عائد کیا گیا۔نئی پالیسی کے تحت تیرہ سو سی سی گاڑیوں پرستر ہزار اورپندرہ سو سے زائد کپیسٹی کی گاڑیوں پر ڈیڑھ لاکھ روپے ٹیکس عائد کیا گیا۔دو ہزار سی سی سے زائد کا انجن رکھنے والی گاڑیوں پر کل ملا کے دو لاکھ روپے لگژری ٹیکس عائد کیا گیا۔اس بات کو بھی ذہن نشین کر لیں کہ امپورٹڈ گاڑیوں کے اس لگژری ٹیکس میں کسٹم ڈیوٹی،ٹوکن ٹیکس،رجسٹریشن فیس اور وِد ہولڈنگ ٹیکس شامل نہیں ہیں۔ایکسائز اور کسٹم کے ذمہ داران کا کہنا تھا کہ لگژری ٹیکس کے خاتمہ سے صوبے میں رجسٹریشنز کا اضافہ ہو گا،جو کہ ایکسائز ڈپارٹمنٹ کے ریونیو میں اضافے کا سبب بھی بنے گا

Top