مارک مارکیز کا دلچسپ کارنامہ؛ ادھار کی موٹر سائیکل سے ریس ٹریک پر واپسی

Marc Marquez Crash Steals a scooter

کیا آپ نے کسی موٹو جی پی میں شریک موٹرسائیکل سوار کو عام گھریلو بائیک پر ریس کے لیے دوڑتا ہوا دیکھا ہے؟ اگر اب تک ایسا نہیں دیکھا تو مارک مارکیز کا نیا کارنامہ ملاحظہ فرمائیں۔ یہ وہی مارک مارکیز ہیں جو 2015 موٹو جی پی ورلڈ چیمپین میں تیسرے نمبر پر آئے تھے۔ یہ واقعہ ہفتے کے روز اس وقت پیش آیا کہ جب مارک مارکیز نے فری پریکٹس 3 میں دوسرے اور فری پریکٹس 4 میں پہلے نمبر پر آنے کے بعد اگلی ریس میں موٹر سائیکل دوڑا رہے تھے۔ اس دوران برسات کے باعث ریس ٹریک پر موٹر سائیکل چلانے میں شدید مشکلات پیش آئیں اور پھر وہ ہوا جس کی کسی کو توقع نہ تھی۔

فلائینگ لیپ کے دوران مارک مارکیز آٹھویں نمبر پر اپنی منزل کی جانب رواں دواں تھے کہ اچانک موٹر سائیکل پر ان کی گرفت کمزور ہوگئی اور وہ اپنا توازن برقرار نہ رکھ سکے۔ لیکن دلچسپ اور مضحکہ خیز مناظر اس وقت دیکھنے کو ملا کہ جب موٹر سائیکل سمیت زمین پر گرنے کے بعد مار مارکیز نے ریس ٹریک کے ساتھ موجود سروس روڈ کی طرف دوڑ لگا دی اور وہاں کھڑی موٹر سائیکل میں چابی گھما کر یہ جا وہ جا۔ مارک مختلف گلیوں اور نکڑوں سے ہوتے ہوئے اسی موٹر سائیکل پر دوبارہ اپنے کیمپ پہنچے تاکہ ریس میں دوبارہ حصہ لے سکیں۔

یہ بھی دیکھیں: ڈرائیور اپنی گاڑی آٹو پائلٹ پر منتقل کر کے سو گیا

مارک مارکیز نے اس واقعے کو بیان کرتے ہوئے کہا کہ جہاں میں اور میری موٹر سائیکل گرے خوش قسمتی سے وہاں سے کچھ فاصلے پر مجھے ایک موٹر سائیکل نظر آگئی۔ اس موٹر سائیکل کے آس پاس کوئی موجود نہ تھا لیکن چابی اپنی جگہ لگی ہوئی تھی۔ انہوں نے بتایا کہ وہ فوراً اس جانب دوڑ پڑے اور قریب جا کر علم ہوا کہ وہ ایک موٹر سائیکل ایک فوٹو گرافر کی ہے۔ مارک نے وہاں موجود فوٹو گرافر سے اجازت لی اور اپنا ہیلمٹ درست کر کے روانہ ہوگئے۔ اس حوالے سے مارک نے یہ بھی کہا کہ اگر وہ فوٹو گرافر اجازت نہ بھی دیتا تو وہ موٹر سائیکل بھگا لے جاتے کیوں کہ اپنے کیمپ تک پہنچنا ان کے لیے ازحد ضروری تھا۔

اپنے کیمپ میں واپسی کے بعد مارک نے ایک بار پھر ریس میں حصہ لیا اور چوتھے نمبر پر آئے۔ اس دلچسپ واقعے کی ریکارڈنگ ذیل میں دیکھی جاسکتی ہے:

Adan Ali

Adan is a Tribe Leader at Drive Tribe, who writes to share his passion for cars, culture and gadgetry through words. So far his writings and contributions have been able to make their way to media outlets like PakWheels and Dawn. Reach out to him by tweeting @adanali12

Top