نیشنل ہائی وے اینڈ موٹروے پولیس نے 18 ملین ای-چالان جاری کیے


نیشنل ہائی وے اینڈ موٹروے پولیس اب تک 18 ملین ای-چالان جاری کرچکی ہے اور پنجاب انفارمیشن ٹیکنالوجی بورڈ (PITB) کے ای-ٹکٹنگ سسٹم کو استعمال کرکے اس عمل سے 8.2 ارب روپے جمع کر چکی ہے۔ روزانہ کی بنیاد پر اوسط چالان تقریباً 31,000 ہیں۔

مندرجہ بالا اعداد و شمار ایک اجلاس میں ظاہر کیے گئے جو 28 اگست 2018ء بروز منگل کو ڈاکٹر عمر سیف کی زیر صدارت ہوا۔ کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے PITB کے موجودہ چیئرمین عمر سیف نے کہا کہ ٹیکنالوجی نے ٹریفک کے ٹکٹنگ نظام میں شفافیت قائم کی اور لوگ بڑے پیمانے پر اس ٹیکنالوجی کو قبول کر چکے ہیں۔

ای-چالان ٹکٹنگ سسٹم چالان کے عمل کو آسان بنانے اور ٹریفک خلاف ورزیوں کو روکنے کے لیے بنایا گیا تھا۔ سفر کرنے والے افراد بغیر کسی بینک کا رخ کرنے کے اپنے جرمانے باآسانی ادا کر سکتے ہیں جو وقت کی بچت کرتا ہے۔

یہ سسٹم پاکستان بھر میں کام کر رہا ہے اور اتھارٹی اسے اپنی پوری صلاحیت کے ساتھ استعمال کر رہی ہے۔

نیشنل ہائی وے اینڈ موٹروے پولیس کی جانب سے جدید ترین ٹیکنالوجی کے ذریعے جرمانے حاصل کرنے کے علاوہ نیشنل ہائی وے اتھارٹی (NHA) 2 اگست 2018ء سے ملک بھر میں ٹول ٹیکس کے نرخوں میں 10 فیصد اضافہ کر چکی ہے؛ جس کو بڑھانے کی وجہ افراط زر اور ملک کے قومی اثاثوں کی مناسب دیکھ بھال کے لیے درکار مزید فنڈز بھی ہیں۔

نئے ٹیکس حکومت کو اتھارٹی کی جانب سے 5 ارب روپے اضافہ دیں گے جو قومی شاہراہوں اور موٹرویز کی دیکھ بھال میں استعمال ہوں گے۔

ہماری طرف سے اتنا ہی، اپنے خیالات نیچے تبصروں میں پیش کیجیے۔


My name is M. Ali Laghari and I love to read and write about Cars.

Top