استعمال شدہ سیڈان لینا چاہتے ہیں؟ گزشتہ دہائی کی بہترین گاڑیوں میں سے منتخب کیجیے

featured-image

کئی مضامین میں اس حوالے سے کافی بار لکھا جا چکا ہے کہ متعدد یورپی کار ساز اداروں بشمول ووکس ویگن، رینالٹ اور فیات پاکستان میں گاڑیاں متعارف کروانے میں دلچسپی رکھتے ہیں۔ یہ بات نہ صرف عام پاکستانی کے لیے خوش آئند ہے بلکہ پاکستان کی معیشت کے لیے بھی سودمند ثابت ہوسکتی ہے۔ ان اداروں کی پاکستان میں سرمایہ کاری سے ملازمتوں کے بھی مواقع پیدا ہوں گے۔ لیکن جب یہ ہوگا سو ہوگا، فی الحال تو ہم انہی گاڑیوں میں سے انتخاب کرسکتے ہیں کہ جو اس وقت دستیاب ہیں۔

اس بلاگ میں ہم سال 2005 سے 2015 کے درمیان پیش کی جانے والی سیڈان گاڑیوں کا ذکر کریں گے۔ دنیا کے دیگر ممالک کی طرح پاکستان میں بھی ہیچ بیک (چھوٹی) گاڑیوں کی قبولیت میں اضافہ ہورہا ہے لیکن اس کے باوجود “ڈگی والی گاڑی” کی پسندیدگی میں کمی نہیں دیکھی گئی۔ آج بھی سیڈان گاڑیوں کو زیادہ ترجیح دی جاتی ہے۔ قارئین کی سہولت کے لیے میں نے سیڈان گاڑیوں کو دو زمروں میں تقسیم کردیا ہے۔ پہلے زمرے میں ہم مقامی تیار شدہ سیڈان گاڑیوں سے متعلق بات کریں گے اور پھر دوسرے زمرے میں درآمد شدہ سیڈان کا ذکر آئے گا۔

مقامی تیار شدہ سیڈان گاڑیاں

ٹویوٹا کرولا

اس میں کوئی دو رائے نہیں ہیں کہ کرولا پاکستانیوں کی سب سے پسندیدہ گاڑی ہے۔ صرف پچھلے دس سالوں ٹویوٹا کرولا کی تین نئی جنریشن متعارف کروائی گئیں۔ نویں جنریشن کرولا ( جسے لوگ CowRolla کے نام سے بھی یاد کرتے ہیں) سے جون 2014 میں پیش کی گئی گیارہویں جنریشن کرولا تک سب ہی کو یہاں مقبولیت حاصل ہوئی۔ ان کرولا گاڑیوں میں 1300 سی سی انجن سے لے کر 2 ہزار سی سی انجن تک فراہم کیا گیا۔ یہ متعدد ورژنز جیسے XLi، GLi، Se سلون اور 2.0 ڈی وغیرہ کے ساتھ پیش کی جاتی رہی ہیں۔ آج بھی نویں جنریشن ٹویوٹا کرولا کا 2005-2008 ماڈل 7 لاکھ سے 11 لاکھ روپے تک باآسانی مل جائے گا۔ کرولا کی دسویں جنریشن چونکہ 2008 کے وسط میں پیش کی گئی، اس لیے اس جنریشن کی استعمال شدہ گاڑی نسبتاً مہنگی ہے۔ یہ تقریباً 10 لاکھ سے 15 لاکھ روپے میں مل جائے گی۔ گیارہویں جنریشن کی ٹویوٹا کرولا کو ابھی زیادہ وقت نہیں گزرا اور کار ساز ادارے کی طرف سے بھی اس کی فروخت جاری ہے۔ البتہ 2014 کی استعمال شدہ VVTi XLi تقریباً 16-17 لاکھ روپے میں مل جانی چاہیے۔

9th gen corolla 10th gen Toyota_Corolla 11th gen Toyota-Corolla

ہونڈا سِوک اور ہونڈا سِٹی

ہونڈا کی سِوک اور سِٹی دونوں ہی اپنی مثال آپ ہیں۔ پاکستان میں صرف نئی ہی نہیں بلکہ استعمال شدہ گر صاف ستھری اور اچھی حالت میں بھی دستیاب ہیں۔ ہونڈا ایٹلس نے 2006 میں آٹھویں جنریشن سِوک (جسے Rebornکہا جاتا ہے) پیش کی جسے بعد ازاں 2012 میں موجودہ سِوک سے تبدیل کردیا گیا۔ پچھلے سال 2015 میں عالمی سطح پر ہونڈا سِوک کی دسویں جنریشن متعارف کروائی گئی۔ اس نئی سِوک کی رواں سال ستمبر کے مہینے میں پاکستان آمد متوقع ہے جس کی وجہ سے موجودہ سِوک کی فروخت میں واضح کمی دیکھی جارہی ہے۔ سِوک کی مانگ میں کمی نے استعمال شدہ مارکیٹ کو بھی متاثر کیا۔ اس وقت آٹھویں جنریشن سوک رنگ، حالت اور خصوصیات کے اعتبار سے کم و بیش 10 سے 17 لاکھ روپے کے اندر اندر مل جانی چاہیے۔

ہونڈا ایٹلس کی جانب سے سِٹی کی نئی جنریشن پاکستان میں متعارف نہ کروانے کے فیصلے کے بعد پرانی جنریشن کی سِٹی آج بھی فروخت کی جارہی ہے۔ سیڈان گاڑیوں میں چوتھی جنریشن کی سِٹی اپنا نمایاں مقام رکھتی ہے تاہم اس کے سسپنشن سے متعلق اکثر شکایات سامنے آتی رہتی ہیں۔ سِٹی کا سال 2006 ماڈل تقریباً 8 لاکھ اور سال 2015 ماڈل تقریباً 17 لاکھ روپے میں مل سکتا ہے۔

Honda_Civic_2015_New_GrillHonda City 2014

سوزوکی لیانا

اگر آپ کا دل ٹویوٹا اور ہونڈا کی گاڑیوں سے بھر چکا ہے اور اتفاق سے آپ بہادر بھی ہیں تو پھر سوزوکی لینا دیکھیے۔ لیکن یہاں یہ بات بھی بتاتا چلوں کہ پاک سوزوکی مالی سال 2014-15 میں ایک بھی لیانا فروخت نہ کر پائی تھی۔ امید تو یہ تھی کہ لیانا اپنی پیش رو گاڑیوں سوزوکی بلینو اور سوزوکی مرگلہ کی طرح پسند کی جائے گی تاہم اس کا جادو زیادہ عرصے نہ چل سکا۔ سال 2006-07 میں اس کے زوال کا آغاز کچھ ایسے ہوا کہ 2007-08 میں صرف چند سو ہی گاڑیاں فروخت کی جاسکیں جبکہ بعد کی صورتحال تو اس سے بھی بدتر رہی حتی کہ سال میں ایک بھی گاڑی فروخت نہ ہوئی۔ہونڈا سِٹی 2008-09 اور 2000 سے پہلے کی کرولا کی قیمت میں سوزوکی لیانا 2012-13 ماڈل باآسانی مل جائے گا۔

Suzuki Liana Pakistan

مٹسوبشی لانسر اور نسان سنی

ان دونوں ہی گاڑیوں کی ملک میں تیاری بند ہوچکی ہے۔ اس لیے ایسی گاڑیاں رکھنے والے اکثر پرزوں کی عدم دستیابی یا بہت زیادہ قیمت کی شکایت کرتے نظر آتے ہیں۔ لیکن ایک بات تو ماننا پڑے گی کہ ان گاڑیوں کا معیار اور قدر بہت اچھی ہے۔ اگرآپ طویل عرصے تک ذاتی استعمال کے لیے کم قیمت میں معیاری گاڑی خریدنا چاہتے ہیں تو ان دو میں سے کسی بھی ایک کا انتخاب مناسب رہے گا۔ آپ کو 2005-06 کی مٹسوبشی لانسر 7 لاکھ روپے سے بھی کم قیمت میں مل جائے گی جبکہ نسان سنی 2005-06 کا ماڈل لگ بھگ 7 لاکھ روپے میں مل سکتا ہے۔

Mitsubishi_Lancer_(Uttaradit,_Thailand)

درآمد شدہ سیڈان گاڑیاں

ٹویوٹا کرولا ایگزیو

جاپانی کارساز ادارہ ٹویوٹا اپنی مقامی مارکیٹ میں سب سے بہترین گاڑیاں پیش کرتا آرہا ہے۔ جاپان میں سیڈان کرولا کا نام ایگزیو جبکہ اسٹیشن ویگن کا نام فیلڈر رکھا گیا ہے۔ ناموں یہ تبدیل 2006ء میں کی گئی جب جاپان میں کرولا کی دسویں جنریشن متعارف کروائی گئی۔ یہ ایک زبردست گاڑی ہے تاہم پاکستان میں کار چور بھی اس کی تاک میں رہتے ہیں۔ یہاں درآمد کی جانے والی ایگزیو مارکیٹ میں متعدد خصوصیات کے ساتھ دستیاب ہے جن کے نام یہ ہیں:
ایگزیو G – 1.5
لکسِل 1.5
ایگزیو X – 1.5
X اسپیشل ایڈیشن 1.5
X ایچ آئی ڈی ایکسٹرا لمیٹڈ 1.5
ہائبرڈ 1.5
لکسِل 1.8
لکسِل ایلفا ایڈیشن 1.8

ٹویوٹا کرولا ایگزیو سال 2007 کا ماڈل تقریبا10 لاکھ روپے میں مل جائےگا جبکہ اس سے اگلے سالوں کا ایڈیشن تقریباً 20 لاکھ روپے تک دستیاب ہوگا۔ ہائبرڈخصوصیت کی حامل ایگزیو 2012-14 ماڈل کی قیمت اندازاً 28 لاکھ سے 32 لاکھ کے درمیان ہوگی۔

2007 Toyota Corolla Axio

نسان بلوبرڈ / بلوبرڈ سیلفی / ٹیڈا

نسان بلوبرڈ کا انداز شاید آپ کو زیادہ نہ بھائے لیکن بہرحال یہ درآمد شدہ سیڈان گاڑیوں میں سے ایک اچھا انتخاب ہوسکتا ہے۔ یہ 1800 سی سی اور 2 ہزار سی سی انجن کے ساتھ پیش کی جاتی ہے۔ اچھی حالت میں دستیاب بلو برڈ 2007 کی قیمت 15 لاکھ روپے کے آس پاس ہونی چاہیے۔ البتہ ٹیڈا چھوٹی گاڑی ہونے کی وجہ سے 10 سے 11 لاکھ روپے میں مل جائے گی۔

nissan_bluebird_sylphy

ہونڈا اکارڈ

سال 2005 سے 2015 کے درمیان فروخت کی جانے والی ہونڈا اکارڈ بھی استعمال شدہ گاڑیوں کی مارکیٹ میں باآسانی مل جائے گی۔ یہ نہ صرف اچھی حالت میں ہوں گی بلکہ ان کی قیمت بھی بہت مناسب ہوگی۔ چونکہ اس میں طاقتور انجن لگایا گیا ہے اس لیے ایندھن اور دیگر عام اخراجات بشمول پرزوں کی قیمت کافی زیادہ ہوسکتے ہیں۔ لیکن بہرحال، یہ اپنے انداز میں بہت منفرد ہے اور گاڑیوں کے شوقین افراد میں اپنا نمایاں مقام رکھتی ہے۔ آپ کو اکارڈ 2005 باآسانی 16 لاکھ سے 18 لاکھ روپے تک مل جائے گا۔ سال 2006 کا تھائی ماڈل مع 2400 سی سی انجن، اس سے بھی کم پیسوں میں مل جائے گی۔

honda-accord-2007-sedan-lwwg4ngs

ایک بات واضح کرتا چلوں کہ یہاں صرف انہی گاڑیوں کا ذکر کیا ہے جو استعمال شدہ گاڑیوں کی مارکیٹ میں مناسب قیمت پر دستیاب ہیں۔ ویسے تو مرسڈیز S کلاس 2015 بھی سیڈان ہی میں شمار ہوتی ہے لیکن اس کی قیمت ٹویوٹا کرولا اور مٹسوبشی لانسر سے کہیں زیادہ ہے۔ مزید کے لیے پاک ویلز پر استعمال شدہ گاڑیوں کا زمرہ ملاحظہ کرسکتے ہیں۔

Top