پاکستان کی پہلی الیکٹرک بائیک-شیئرنگ سروس کا آغاز

0 1 894

وفاقی حکومت نے اسلام آباد میں «ezBike» کے نام سے پاکستان کی پہلی الیکٹرک بائیک-شیئرنگ سروس شروع کر دی ہے۔ وزیر انفارمیشن ٹیکنالوجی و ٹیلی کام سید امین الحق نے اس سروس کا افتتاح کیا۔

پہلے مرحلے میں یہ سروس صرف راولپنڈی اور اسلام آباد کے لیے دستیاب ہوگی۔

الیکٹرک بائیک ایپ:

‏ezBike ایک ایپ بیسڈ سروس ہے جو عوامی استعمال کے لیے مخصوص مقامات پر شہر بھر کے لیے الیکٹرک بائیکس چلاتی ہے۔ شہری ezBike موبائل ایپ استعمال کرکے اپنے قریب پارک کی گئی الیکٹرک بائیک کو لوکیٹ اور ریزرو کر سکتے ہیں۔ پھر وہ خود اسے چلا کر منزل تک پہنچ سکتے ہیں اور بائیک کو اپنے مخصوص ایریا میں پارک کر سکتے ہیں۔ اس کے بعد یہ اگلے شخص کے لیے دستیاب ہوگی۔

اس پروجیکٹ کے بنانے والوں کا کہنا ہے کہ رجسٹریشن سے بکنگ اور پیمنٹ تک کا پورا عمل ڈجیٹل ہے۔ صارف کو بائیک اَن لاک کرنے کے لیے 5 روپے ادا کرنا ہوں گے اور سفر کے 5 روپے فی منٹ۔ رائیڈر کسی کام کے لیے سفر میں رکھ بھی سکتا ہے۔ اس دوران اس سے 2 روپے فی منٹ کے کم ریٹ لیے جائیں گے۔

ezBike

افتتاحی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے امین الحق نے کہا کہ یہ سروس ایک بہترین سہولت ہوگی، خاص طور پر ورکنگ ویمن یعنی کام کرنے والی خواتین کے لیے۔ انہوں نے کہا کہ «الیکٹرک وہیکل ٹیکنالوجی ٹرانسپورٹ کی مارکیٹ کا سب سے بڑا گیم-چینجر ہے ۔»

‏ezBike کا مشن:

‏ezBike رومر ٹیکنالوجیز نے جیز کے تعاون سے بنائی اور لانچ کی ہے تاکہ جیز کی سم کے ذریعے کنیکٹیوٹی فراہم کرے۔ اس کے علاوہ صارفین پیمنٹ بھی جیز کیش کے ذریعے کریں گے۔

رومر ٹیکنالوجی اسلام آباد میں قائم ایک اسٹارٹ اپ ہے، جو اگلے سال تک ملک بھر میں 2,000 موٹر سائیکلیں چلانے کا منصوبہ رکھتا ہے۔ نئی سروس پاکستان میں پبلک ٹرانسپورٹ کے تصور کو ہی تبدیل کرنے کی صلاحیت رکھتی ہے۔

بین الاقوامی پر بائیک-شیئرنگ کمپنیز پہلے ہی ٹرانسپورٹ سسٹم میں انقلابی تبدیلی لائی ہیں۔ مختلف کمپنیز دنیا بھر کے 88 ممالک میں 1,00,000 سے زیادہ بائیکس پیش کرتی ہیں۔

موجودہ حکومت کی توجہ پاکستان میں الیکٹرک گاڑیاں لانے پر ہے۔ اس ہدف کو حاصل کرنے کے لیے حکمران جماعت نے پچھلے دو سال میں کئی ای-وہیکل فرینڈلی پالیسیاں لائی ہے۔

 

Google App Store App Store

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.